مظلوم کی دُعا اسی وقت قبول ہوتی ہے، ایک دلچسپ حکایت

تفسیر ابن کثیر میں بحوالہ ابن عساکر ایک ایسے شخص کا قصہ تقل کیا ہے۔ جو کرایہ پر مسافروں کو اپنی سواری پرلے جاتا تھا۔ اس شخص کا بیان ہے، کہ ایک مرتبہ ایک شخص میری سواری پر سوار ہوا، میں اور وہ سفر کر رہے تھے، کہ ایک جنگل میں ایک موڑ پر پہنچ کر وہ شخص کہنے لگا کہ ادھر کو چلو۔ اس راستہ سے مسافروں کی آمدورفت نہ تھی۔ میں نے کہا، کہ مجھے اس راستے سے واقفیت نہیں ہے۔ وہ شخص کہنے لگ کہ یہ قریب کا راستہ ہے، ادھر سے چلنا چاہیے۔ میں اس راستہ پر چل دیا۔ وہ بھی میرے ساتھ تھا۔ چلتے چلتے ایک جنگل بیابان اور لق ودق میدان میں پہنچے جہاں ایک گہری وادی تھی، اور وہاں بہت سارے لوگ مرے پڑے تھے۔
وہاں پہنچ کر وہ کہنے لگا، کہ خچر کو زرا روک، میں اترنا چاہتا ہوں۔ خچر رکتے ہی وہ شخص اتر پڑا اوراس نے چھری نکالی، اور مجھے قتل کرنے کا ارادہ کیا۔ میں اس کے سامنے سے بھاگ گیا۔ اس نے میرا پیچھا کیا، میں نے اس کو اللہ کی قسم دلائی، اور اسے کہا کہ میری جان چھوڑ کے اور خچر تمام اسباب تو ساتھ لے لے۔ وہ کہنے لگا، کہ یہ چیزیں تو میری ہو ہی چکی ہیں، میں تو تجھے قتل کرنے پر اصرار کرتا رہا ہوں۔ جب میں نے یہ ماجرا دیکھا اور اپنے آپ کو عاجز سمجھ لیا تو میں نے کہا، کہ اتنی مہلت تو دے دے کہ میں دو رکعت نماز پڑھ لوں۔
وہ شخص کہنے لگا، اچھا جلدی سے پڑھ لے۔ میں نماز پڑھنے کھڑا ہو گیا، میں نماز میں قراآن پڑھنا چاہتا تھا تو ایک حرف بھی زبان پر نہ آتا تھا۔ میں بالکل حیران کھڑا تھا کہ کیا کروں۔ اور ادھر وہ تقاضا کر رہا تھا، کہ جلدی فارغ ہو۔
میں اسی حال میں تھا کہ اللہ تعالٰی نے میری زبان پر یہ آیت جاری فرمادی ،أَمَّنْ يُجِيبُ الْمُضْطَرَّ إِذَا دَعَاهُ وَيَكْشِفُ السُّوءَ الخ النمل 62
ترجمہ، بتاؤ کیا معبودانِ باطلہ بہتر ہیں یا اللہ بہتر ہے جو بیقرار آدمی کی دعا قبول فرماتا ہے جب وہ اس کو پکارے اور مصیبت کو دور کرتا ہے۔ الخ۔۔۔۔۔
اس کا میری زبان سے نکلنا تھا کہ ایک گھوڑسواروادی کی گہرائی سے ایک نیزہ لئے ہوئے آیا، اور اس نے اس شخص کو نیزہ مارا جو مجھے قتل کرنا چاہتا تھا۔ نیزہ سیدھا اس کے دل میں لگا اور پا ر کرتا ہوا چلا گیا۔ اور وہ شخص وہیں ڈھیر ہو گیا۔ میں نے گھوڑ سوار کو اللہ کی قسم دی اور کہا، کہ سچ بتا تو کون ہے؟ اس نے کہا، میں اس ذات پاک کا بھیجا ہوا ہوں جو بیقرار کی دعا کو قبول فرماتا ہے، جب وہ اس کو پکارے۔ اور مصیبت کو دور فرماتا ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *