مصر میں ایک شخص مسجد کے برابر رہتا تھا۔ پابندی سے اذان دیتا، اور جماعت میں شرکت کرتا چہرے پر عبادت اور اطاعت کی رونق بھی تھی۔
اتفاق سے جب ایک دن آذان دینے کے لیے مسجد کے مینار پر چڑھا۔ تو قریب میں ایک عیسائی شخص کی ایک خوبصورت لڑکی پر نظر پڑی۔ جسے دیکھ کر وہ اس پر دل و جان سے فریفتہ ہو گیا۔ اور اذان چھوڑ کر وہیں سے سیدھا اس مکان میں پہنچا۔
لڑکی نے اسے دیکھ کر پوچھا کیا بات ہے؟ میرے گھر میں کیوں آیا؟ اس نے جواب دیا میں تجھے اپنا بنانے آیا ہوں۔ اس لئے کہ تیرے حسن و جمال نے میری عقل کو ماؤف کردیا ہے۔ لڑکی نے جواب دیا۔ میں کوئی تہمت والا کام نہیں کرنا چاہتی ہوں۔ تو اس نے پیشکش کی کہ میں تجھ سے نکاح کروں گا۔
لڑکی نے کہا، کہ تو مسلمان اور میں عیسائی ہوں۔ میرا باپ اس رشتے پر تیار نہ ہوگا۔ اس شخص نے کہا، کہ میں خود ہی عیسائی بن جاتا ہوں۔ چنانچہ اس نے مخص اس لڑکی سے نکاح کی خاطر عیسوی مذہب قبول کر لیا۔ لیکن ابھی وہ دن بھی پورا نہیں ہوا تھا کہ یہ شخص اس گھر میں رہتے ہوئے کسی کام کے لیے چھت پر چڑھا۔ اور کسی طرح سے وہاں سے گر پڑا۔ جس سے اس کی موت واقع ہوگئی۔
افسوس دین بھی گیا اور لڑکی بھی ہاتھ نہ آئی۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *