بنی اسرائیل کا ایک عابد اپنے عبادت خانہ میں عبادت کیا کرتاتھا ۔ تو ایک گمراہوں کا ٹولہ ایک کنجری کے پاس آیا اور اس سے کہا تم کسی نہ کسی طریقہ سے اس عابد کو بھٹکادو ۔ چنانچہ وہ فاحشہ عورت عابد کے پاس بارش والی اندھیری رات میں آئی اور اس کو پکارا تو عابد نے اس کو جھانک کر دیکھا تو عورت نے کہا اے خدا کے بندے مجھے اپنےپاس پناہ دے ۔ لیکن عابد نے اس کی پرواہ نہ کی اور اپنی نماز میں مصروف ہوگیا ۔ جب کہ اس کا جل رہا تھا ۔ اس لونڈی نے پھر کہا اے اللّٰہ کے بندے مجھے اپنے پاس پناہ دیدے تم بارش اور اندھیری رات کو نہیں دیکھتے وہ یہی کہتی رہی حتٰی کہ عابد نے اس کو پناہ دیدی اور اس طرح سے وہ عابد کے قریب ہی لیٹ گئی اور اپنے بدن کی خوبصورتیاں دکھانے لگ گئی یہاں تک کہ عابد کا نفس اس کی طرف مائل ہو گیا ۔ توعابد نے کہا اللہ کی قسم ایسا نہیں ہو سکتا حتٰی کہ یہ دیکھ لیے کہ آگ پر کتنا صبر کرسکتا ہے ۔ پھر وہ چراغ یا لالٹین کی طرف گیا اور اپنی انگلی اس پررکھ دی حتٰی کہ وہ جل گئی ۔ پھر وہ اپنی نماز کی طرف لوٹ آیا لیکن اس کے نفس نے پھر پکارا تو یہ پھر چراغ کی طرف گیا اور انگلی رکھ کر جلا ڈالی پھر اسی طرح سے اس کا نفس اس کی خواہش کرتا رہا اور وہ چراغ کی طرف لوٹتا رہا حتٰی کہ اس نے اپنی ساری انگلیاں جلا ڈالیں جس کووہ عورت دیکھ رہی تھی پھر اس نے ایک چیخ ماری اور مر گئی ۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *