قلب الاعیان میں ایک روایت شیخ عیسی سے منقول ہے، کہ ایک مرتبہ سہلؒ بن عبداللہ کا گزر ایک بازاری عورت کے پاس سے ہوا۔ آپ نے اس سے فرمایا کہ میں تیرے پاس رات عشاء کے بعد آؤں گا، یہ سن کر وہ عورت بہت خوش ہوئی۔ اور بناؤContinue Reading

صدقہ دیا کرو، چاہے تھوڑا ہی کیوں نہ ہو۔
تھوڑی دیر ہی ہوئی تھی، کہ ایک بھیڑیا آیا، اور اس کے بچے کو اُٹھا کر لے گیا۔ عورت بھیڑیئے کے پیچھے میرا لڑکا میرا لڑکا کہتی ہوئی دوڑی۔ اس پر اللہ تعالٰی نے ایک فرشتہ کو نازل فرمایا

ایک عجیب و غریب واقعہ ہے، جو ایک اندلسی عالم کو پیش آیا ۔ جنہوں نے اندلس سے مشرق تک کا سفر پیدل کیا ۔ تاکہ کسی امام سے ملاقات کرکے اس سے علم حاصل کریں ۔ لیکن جب وہ اس عالم کے پاس پہنچ گئے تو وہ قید میںContinue Reading

دینِ حق پر قائم رہنا، چاہے جان بھی چلی جائے
ایک دن وہ چلا آ رہا تھا کہ ایک بڑا جانور نمودار ہوا اور لوگ اس کے ڈر سے راستہ چلنے سے رک گئے۔ لڑکے نے جب یہ نظارہ دیکھا تو دل میں سوچنے لگا کہ آج ساحر اور راہب کا عقدہ کھل جائے گا۔ کہ آیا ساحر سچا ہے ، یا راہب

حضرت ابوذر رضی اللہ عنہ کے اسلام کے واقعہ کی ایک دوسری روایت ہے جس کے راوی ان کے بھتیجے عبداللہ بن الصامب الغفاری رضی اللہ عنہ ہیں ۔ امام مسلم رحمۃ اللہ علیہ نے اس کو اپنی صحیح میں ذکر کیا، جس کا خلاصہ یہ ہے، حضرت ابوذر رضیContinue Reading

مظلوم کی دُعا اسی وقت قبول کی جاتی ہے۔
چلتے چلتے ایک جنگل بیابان اور لق ودق میدان میں پہنچے جہاں ایک گہری وادی تھی، اور وہاں بہت سارے لوگ مرے پڑے تھے۔
وہاں پہنچ کر وہ کہنے لگا، کہ خچر کو زرا روک، میں اترنا چاہتا ہوں۔ خچر رکتے ہی وہ شخص اتر پڑا اوراس نے چھری نکالی،

خوشی کا دن سب سے برا دن ثابت ہوا
اس کی بڑی خوبصورت لونڈی تھی، اس کے حسن و جمال کا کوئی مثل نہ تھا۔ اس کا نام حبا تھا۔ بیویوں سے زیادہ اسے پیار کرتے تھے۔ اس کو لے کر محل میں داخل ہوئے۔ پھل آ گئے، مختلف کھانے کی چیزیں آ گئیں، مشروبات آ گئے۔ کہ آج کا دن امیرالمومنین خوشی سے گزارنا چاہتے ہیں

شیطان کی شرارت
شیطان نے انگلی شیرہ میں ڈبوئی اور دیوار پر لگا دی۔ مکھی آ کر شیرے پر بیٹھ گئی۔ اس مکھی کو کھانے کے لئے ایک چھپکلی آ گئی۔ ساتھ ہی ایک آدمی کام کررہا تھا۔ اس نے چھپکلی کو دیکھا، تو اس نے جوتا اٹھا کر چھپکلی کو مارا۔ وہ جوتا دیوار سے ٹکرا کر حلوائی کی مٹھائی پر گرا

پھر بھی حضرت موسٰی علیہ السلام کو غصہ نہ آیا
حضرت موسٰی علیہ السلام کے ریوڑ سے ایک بکری بھاگ گئی۔ ان کو پکڑنے کے لیے حضرت موسٰی علیہ السلام دوڑے۔ وہ بھاگتے بھاگتے میلوں دوڑ گئی۔ اور حضرت موسٰی علیہ السلام لاٹھی پیچھے پیچھے دوڑ رہے ہیں، کاتٹوں سے آپ کے پاؤں مبارک لہولہان ہوگئے۔ اور بکری کا بھی یہی حال ہوگیا۔ تمام کانٹے چبھ گئے اس کے پاؤں سے بھی خون بہہ رہا تھا