کب ضیا بار ترا چہرۂ زیبا ہوگاکیا جب آنکھیں نہ رہیں گی تو اجالا ہوگا مشغلہ اس نے عجب سونپ دیا ہے یاروعمر بھر سوچتے رہیے کہ وہ کیسا ہوگا جانے کس رنگ سے روٹھے گی طبیعت اس کیجانے کس ڈھنگ سے اب اس کو منانا ہوگا اس طرف شہرContinue Reading

جیسے بالوں میں کوئی پھول چنا کرتا ہےگھر کے گلدان میں پھولوں سا سجا لیں تم کو کیا عجب خواہشیں اٹھتی ہیں ہمارے دل میںکر کے منا سا ہواؤں میں اچھالیں تم کو اس قدر ٹوٹ کے تم پہ ہمیں پیار آتا ہےاپنی بانہوں میں بھریں مار ہی ڈالیں تمContinue Reading

سوچ کے ستن میں میں اک لپٹی ہوئی تصویراک دیوار کی مانند میں انجان کھڑی ہوں اک بے چین سی روح ہوں اک خاک ِنشیں ہوںکبھی دستک کبھی گمان کبھی حسرت کی کلی ہوں اک آئینہ میں کھڑی میں بے جان سی مورتدل کی گہرایوں میں بہت ویران سی پڑیContinue Reading

ﭼﻠﻮ ﺍﭼﮭﺎ ﮐﯿﺎ ﺗﻢ ﻧﮯﻣﺤﺒﺖ ﺗﺮﮎ ﮐﺮ ﮈﺍﻟﯽ ﻣﺤﺒﺖ ﻭﯾﺴﮯ ﺑﮭﯽ ﺍﺗﻨﺎ ﺑﮍﺍ ﺭﺷﺘﮧ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺗﺎﺟﺴﮯ ﮨﺮ ﺣﺎﻝ ﻣﯿﮟ ﺭﮐﮭﻨﺎ ﺿﺮﻭﺭﯼ ﮨﻮ ﻣﺤﺒﺖ ﺍﻭﺭ ﻣﺠﺒﻮﺭﯼ ﻣﯿﮟ ﺗﮭﻮﮌﺍ ﻓﺮﻕ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯﺧﻮﺷﯽ ﮨﮯ ﺗﻢ ﻧﮯ ﺍﺱ ﺭﺷﺘﮯ ﮐﻮ ﻣﺠﺒﻮﺭﯼ ﻧﮩﯿﮟ ﺳﻤﺠﮭﺎ ﭼﻠﻮ ﺍﭼﮭﺎ ﮐﯿﺎ ﺗﻢ ﻧﮯ ﺭﯾﺎ ﮐﺎﺭﯼ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﯽ ﮨﮯﺍﺩﺍﮐﺎﺭﯼ ﻧﮩﯿﮟContinue Reading

دھوپ سات رنگوں میں پھیلتی ہے آنکھوں پر برف جب پگھلتی ہے اس کی نرم پلکوں پر پھر بہار کے ساتھی آ گئے ٹھکانوں پر سرخ سرخ گھر نکلے سبز سبز شاخوں پر جسم و جاں سے اترے گی گرد پچھلے موسم کی دھو رہی ہیں سب چڑیاں اپنے پنکھContinue Reading